Your five minutes are required.

Five minutes, it sounds like a wee amount. But you know what it covers three hundred seconds.

Do you know the name of your news paper hawker who delivers the up-to-date paper every day without being late. Give him your five minutes, it doesn’t do much, but he feels an equal respect for himself too as he does for yourself.

Traffic rules are maybe different in some parts of the world, but the duty criteria of traffic Constable is the same. He has to stand alert during his working hours regardless of any national or personal event or celebration and unpredictable weather. Can’t we say him a Hello! With smile. It doesn’t take much of our efforts,but refreshes his face.

Have you ever stopped by at the stalls of street vendors. They sell little goods on cheap rates. They are so diligent. Never stretch their hand for help, but only to give you a purchase you have just made. They need the respect due on us. Buy their goods no matter you need or not,but to give them respect. Spending little at their stalls won’t make you poor and they also won’t become rich, but your little purchase gives them a mirth worth meaning.

Beautiful people who serve us in restaurants deserve our affability as our friends do. Your tip doesn’t make you someone out of the world. They want your geniality. Talk to them in friendly manner, tap their shoulder when they bring your order would make their day.

Your five minutes would bring tranquillity for your seething soul.

There are so much to discuss,but every discourse ends on five minutes.

Think about it!!!

(Thanks for your time You spend reading my words)

Advertisements

Sweetie’s art work

Are you feeling bad today, knackered, worried about anything, so my Sweetie wants to bring a beautiful smile on your face and for that she has created a wonderful piece of art.Check it out 👇😻How’s that 😻😻Have your cat created any sort of art work, then don’t forget to share. 😻😻😻

Lesson of punctuality

It’s really hard to remember when I was on time especially when it comes to my academic routine.

My Ammi (mother) knows me well that’s why for the journey of my literary affairs she selected school in evening shift. I completed my middle education from there.

But for secondary school certificate I had to take admission in morning shift school, because there was no other way to quench my literacy thirst.

It took two years to attain secondary school certificate. My teachers yearned for myself to be on time, but the most obstinate student didn’t please their waiting eyes.

Then I entered in college (no need to mention morning shift). I spent four years for bachelor’s degree. Forty two months of my degree endured my stubborn nature.

My Ammi would admonish me every now and then. She advised me to come on the right way. She told me I would be in trouble because of my tardiness, but I didn’t pay ear to her golden words,because nature had decided a different trail for teaching me the importance of punctuality.

It was a sunny morning. (Here I need to mention that sunny days in Pakistan are so scorching). So I reached my college late as usual.

Principal welcomed me and some more late comers with certain punishment. We had to stand in the ground for at least 25 minutes. Few students succeeded in making flawless escape. But habitual late comers were busy in paying unintentionally standing ovation to multiple plants and flowers.

When I entered in my class so it was almost thirty minutes of my standing ovation. I just managed to sit when we got a notice that,”today’s classes are cancelled owing to the strike call. Students may go to their homes back.”

Then all of the students stood up. Then the abaya* I just furled I wore once again.

On road there was a ORGANIZED chaos. Tyres were burning amidst of the road. Some motorbikes and other public property was vandalized. Mobsters in a mob threatening pedestrians with their guns.

On my way to home I had two choices whether to continue on road or turned into the street. My two friends were with me. One of them pulling me to go with her on road while other was insisting to move into the street. After a long pull and take later one won.

I walked my home. When I got home it was approximately one hour I didn’t sit.

My Ammi was pleased rather worried.

Why she was pleased?

Because I told her my punishment story. She reminded me all of the lessons and piece of advices she used to give me on punctuality which I always ignored.

After that unforgettable day I don’t remember a time when I am not on time.

I learned that lesson of punctuality so far.

But it’s better to learn late than be ignorant all the time.

*a loose outer garment women wear to cover themselves when they go outside.

Destiny|سرنوشت – A Voice from Iran قسمت

Lalehchini : تحریر

ترجمہ: صبا نیاز صدیقی

اصل تحریر پڑھنے کے لیے درج ذیل لنک پر کلک کریں۔

https://lalehchini.com/2017/08/18/first-blog-post/

مجھے یاد ہے بوشہر کی وہ تباہ حال عمارت جہاں لوگ چند روپے معاوضہ ادا کر کے اندر جا سکتے تھے۔ میرے بچپن کے دنوں میں ہم نے کئ بار وہاں کا رخ کیا۔اس کے پیچھے بہت افسردہ کہانی ہے، لیکن اس سے بھی بڑھ کہ زندگی کا ایک ایسا سبق ہے، کہ شاید اسے سکھانے کے لیے ہی ہمیں کئ بار اس عبرت کے نشان تک لایا گیا تھا ۔

?????کہانی شروع ہوتی ہے،

اس محل کا مالک ایک بہت امیر تاجر تھا۔ لوگوں پہ اپنی امارت کا رعب ڈالنے کے لیے بے تحاشا فضول خرچی کرتا تھا۔لوگ کہتے ہیں کہ وہ دوسروں کے سامنے اپنا سگار جلانے کے لیے ماچس کے بجائے جلتے ہوئے نوٹوں کا استعمال کرتا،اور جب درالخلافہ تہران سے بڑے سیاستدان بوشہر آتے،تو محض اپنی شان و شوکت اور روپے پیسے کی طاقت کے اظہار کے لیے موم بتیاں سلگتے ہوئے نوٹوں سے روشن کرتا۔

وہ چائے سونے کے پیالے میں پیش کرتا اور طعام کے لیے چاندی کے ظروف استعمال کئیے جاتے تھے۔ وہ کسی کے ساتھ خوش مزاجی سے پیش نہیں آتا، جبکہ غریبوں سے بات کرنے کو اپنی توہین خیال کرتا تھا۔

آخرکار، اسکا سب کچھ ختم ہوگیا، مال و دولت کا دیوالیہ نکل گیا۔ مرتے وقت اپنی اولاد کے لیے اس نے ایک روپیہ بھی نہیں چھوڑا ۔ در و دیوار، کھڑکیوں اور سائبان سے محروم اس محل میں جو غرباء اب رہتے ہیں وہ اس شخص کے پوتے ہیں جو کہ انتہائی کسمپرسی کی زندگی گزار رہے ہیں۔یہ زمین اب ان کی ملکیت ہے۔

ان کا گزارہ محنت مزدوری اور لوگوں کے اس معاوضہ پہ ہے جو وہ عبرت کے نشان اس محل کو دیکھنے کے لیے ادا کرتے ہیں۔وہ کسی سے بات کرتے ہیں اور نہ ہی کسی سوال کا جواب دیتے ہیں۔ یہ بات یقینی ہے کہ انہیں اپنے دادا کے ماضی پر ازحد شرمندگی ہے۔

میرے والد نے بتایا تھا کہ ان کے بے رحم اور سخت گیر دادا کی وجہ سے کبھی کسی نے انہیں ملازمت کی پیشکش نہیں کی،کیونکہ ان کے دادا نے کبھی کسی کی عزت نہیں کی اور ہمیشہ خود کو سب سے برتر سمجھا۔

ختم شد ۔۔۔۔۔

Whisper

I want to see you.

Know your voice.

Recognize you when you

first come ’round the corner.

Sense your scent when I come

into a room you’ve just left.

Know the lift of your heel,

the glide of your foot.

Become familiar with the way

you purse your lips

then let them part,

just the slightest bit,

when I lean in to your space

and kiss you.

I want to know the joy

of how you whisper

More”.

Mawlana Jalal-al-din Rumi.

I

My eyesight is good enough than why I can’t see this reality? I asked

Really you can’t see? She was astonished.

Yes, my listening capability is not good,but it’s never bothered me. I just can’t understand why my vision is blur.

It sounds really painful. She sighed

Please help me out it’ll bring about a real problem. I begged

Let me think. Inshallah I’ll get a solution to this problem. She assured me.

After a while she came with result.

“I mulled over the dismaying condition of yours. And I came to know that, your vision is strictly blocked by your I. If you want to see the reality, you have to break your I. After breaking it your eye regain it’s power.”

So,my dear;

Break your “I” for the brightness of your “eye”.

When you break I, reality becomes visible to your eye.

Which Purse?|کدام کیف – A Voice from Iran کونسا پرس از lalehchini.

Lalehchini:تحریر

ترجمہ: صبا نیاز صدیقی

درج ذیل لنک کے ذریعے آپ اصل تحریر پڑھ سکتے ہیں۔

https://lalehchini.com/2019/04/04/which-purse%da%a9%d8%af%d8%a7%d9%85-%da%a9%db%8c%d9%81/

دکان میں دو مختلف پرس کی جانب اشارہ کرتے ہوئے ہلڈا نے ٹام سے پوچھا:”میں کونسا پرس منتخب کروں”۔

ٹام:” مجھے دونوں اچھے لگ رہے ہیں”۔

کرسی پہ بیٹھے ٹام کو خواتین کی چیزوں کی خریداری کے بارے میں واقعی کوئی معلومات نہیں تھیں۔ اس کے لیے تو سب ایک سے تھے۔

دکان میں بیٹھے ہوئے انہیں ایک گھنٹہ ہوچکا تھا جب دکان دار نے نیلا پرس دسویں مرتبہ دکھایا۔ ٹام بہت تھک چکا تھا۔

ہلڈا نے ایک مرتبہ پھر سفید پرس کا موازنہ نیلے پرس سے کیا۔ قیمت دونوں کی یکساں تھی، لیکن حجم کے اعتبار سے سفید پرس بڑا تھا۔

بالآخر نیلا پرس خرید کے ہلڈا اپنے ٹام کے ہمراہ ریلوے اسٹیشن کی جانب چل پڑی۔

راستے میں ہلڈا نے ٹام کو مخاطب کرتے ہوئے کہا، “مجھے سفید پرس لینا چاہیے تھا۔اس میں زیادہ کپڑے آسکتے ہیں۔ میں نیلا پرس سرخ یا سبز لباس کے ساتھ تو نہیں لے سکتی”۔

ٹام نے کہا، “اگر تمہیں یہ پسند نہیں تھا، تو خریدا کیوں؟ مجھے دو میں اسٹور تک جاتا ہوں اور اسے تبدیل کرا دیتا ہوں”۔

ہلڈا:” لیکن ہماری ٹرین 18 منٹ میں چل پڑے گی”۔

ٹام:” مجھے میرا ٹکٹ دو اگر میں وقت پر نہیں پہنچ سکا تو اگلی ٹرین سے آجاوں گا”۔

ٹام شاپنگ سینٹر کی جانب روانہ ہوا، لیکن عین دوراہے پہ دائیں جانب کے بجائے وہ بائیں طرف مڑ گیا۔

اس نے غور کیا کہ سب لوگ اسے گھور رہے ہیں، جو کہ بہت عجیب تھا۔اتنے میں ایک خاتون پولیس افسر نے ٹام کو روکتے ہوئے پوچھا، “آپ زنانہ پرس لے کہ کہاں بھاگ رہے ہیں”؟۔

ٹام؛”میں اسے اپنی اہلیہ کے لیے تبدیل کرانے شاپنگ سینٹر جارہا ہوں”۔

خاتون پولیس افسر؛”شاپنگ سینٹر دائیں جانب ہے ۔مجھے اپنی رسید دکھائیں”۔

ٹام نے رسید تلاش کی،لیکن اس کے پاس موجود نہیں تھی ۔

خاتون پولیس افسر نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا، ” میں آپ کے ساتھ شاپنگ سینٹر تک چلوں گی، جاننے کے لیے کہ آیا آپ سچ کہہ رہے ہیں”۔

ٹام دکان دار کی جانب بڑھا اور خاتون پولیس افسر نے سوال کیا کہ کیا ٹام نے یہ پرس خریدا تھا؟۔

مہربان دکان دار نے جواب دیا، “بالکل!”

جب خاتون پولیس افسر رخصت ہو گئیں تو ٹام نے دکان دار سے کہا، “میں اسے سفید پرس سے تبدیل کرنا چاہتا ہوں”۔

وہاں ایک خاتون سیاہ پرس خرید رہیں تھی اور دکان دار کو پہلے انہیں فارغ کرنا تھا۔

ٹام؛”مہربانی فرمائیں، میری ٹرین چھوٹ جائے گی “۔

خریدار؛” مجھے بھی دیر ہو رہی ہے ۔مجھے گھر جاکر رات کا کھانا بنانا ہے۔”

دکان دار؛”میرے پاس اسی قیمت میں 7،8 سفید پرس موجود ہیں ۔آپ کو یاد ہے انہوں نے کونسا پسند کیا تھا؟”

ٹام کے لیے تو تمام پرس ایک جیسے تھے ۔ اس نے بڑی مشکل سے یاد کرتے ہوئے دائیں جانب رکھا پرس لیتے ہوئے شاپنگ بیگ طلب کیا، تاکہ اس مرتبہ پولیس کو اس پہ چوری کا شبہ نہ ہو ۔

ٹام کے پاس 6 منٹ تھے۔ ریلوے اسٹیشن جاتے ہوئے وہ غلطی سے مخالف سمت میں مڑ گیا ۔

ٹام کو درست سمت میں جانے کے لیے سیڑھیوں والے پل کے اطراف سے گزرنا تھا اور اس کے پاس محض 2 منٹ بچے تھے۔ٹام نے بھاگتے ہوئے سیڑھیاں چڑھیں اور ٹرین میں چھلانگ لگا دی جس کے 1 سکینڈ بعد ٹرین روانہ ہو گئ۔

ٹام نے سکون کا سانس لیا۔”شکر ہے میں وقت پر پہنچ گیا”۔

ہلڈا بیگ کھولتے ہوئے چلائ،” یہ میرا سفید پرس نہیں ہے”۔