Which Purse?|کدام کیف – A Voice from Iran کونسا پرس از lalehchini.


Lalehchini:تحریر

ترجمہ: صبا نیاز صدیقی

درج ذیل لنک کے ذریعے آپ اصل تحریر پڑھ سکتے ہیں۔

https://lalehchini.com/2019/04/04/which-purse%da%a9%d8%af%d8%a7%d9%85-%da%a9%db%8c%d9%81/

دکان میں دو مختلف پرس کی جانب اشارہ کرتے ہوئے ہلڈا نے ٹام سے پوچھا:”میں کونسا پرس منتخب کروں”۔

ٹام:” مجھے دونوں اچھے لگ رہے ہیں”۔

کرسی پہ بیٹھے ٹام کو خواتین کی چیزوں کی خریداری کے بارے میں واقعی کوئی معلومات نہیں تھیں۔ اس کے لیے تو سب ایک سے تھے۔

دکان میں بیٹھے ہوئے انہیں ایک گھنٹہ ہوچکا تھا جب دکان دار نے نیلا پرس دسویں مرتبہ دکھایا۔ ٹام بہت تھک چکا تھا۔

ہلڈا نے ایک مرتبہ پھر سفید پرس کا موازنہ نیلے پرس سے کیا۔ قیمت دونوں کی یکساں تھی، لیکن حجم کے اعتبار سے سفید پرس بڑا تھا۔

بالآخر نیلا پرس خرید کے ہلڈا اپنے ٹام کے ہمراہ ریلوے اسٹیشن کی جانب چل پڑی۔

راستے میں ہلڈا نے ٹام کو مخاطب کرتے ہوئے کہا، “مجھے سفید پرس لینا چاہیے تھا۔اس میں زیادہ کپڑے آسکتے ہیں۔ میں نیلا پرس سرخ یا سبز لباس کے ساتھ تو نہیں لے سکتی”۔

ٹام نے کہا، “اگر تمہیں یہ پسند نہیں تھا، تو خریدا کیوں؟ مجھے دو میں اسٹور تک جاتا ہوں اور اسے تبدیل کرا دیتا ہوں”۔

ہلڈا:” لیکن ہماری ٹرین 18 منٹ میں چل پڑے گی”۔

ٹام:” مجھے میرا ٹکٹ دو اگر میں وقت پر نہیں پہنچ سکا تو اگلی ٹرین سے آجاوں گا”۔

ٹام شاپنگ سینٹر کی جانب روانہ ہوا، لیکن عین دوراہے پہ دائیں جانب کے بجائے وہ بائیں طرف مڑ گیا۔

اس نے غور کیا کہ سب لوگ اسے گھور رہے ہیں، جو کہ بہت عجیب تھا۔اتنے میں ایک خاتون پولیس افسر نے ٹام کو روکتے ہوئے پوچھا، “آپ زنانہ پرس لے کہ کہاں بھاگ رہے ہیں”؟۔

ٹام؛”میں اسے اپنی اہلیہ کے لیے تبدیل کرانے شاپنگ سینٹر جارہا ہوں”۔

خاتون پولیس افسر؛”شاپنگ سینٹر دائیں جانب ہے ۔مجھے اپنی رسید دکھائیں”۔

ٹام نے رسید تلاش کی،لیکن اس کے پاس موجود نہیں تھی ۔

خاتون پولیس افسر نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا، ” میں آپ کے ساتھ شاپنگ سینٹر تک چلوں گی، جاننے کے لیے کہ آیا آپ سچ کہہ رہے ہیں”۔

ٹام دکان دار کی جانب بڑھا اور خاتون پولیس افسر نے سوال کیا کہ کیا ٹام نے یہ پرس خریدا تھا؟۔

مہربان دکان دار نے جواب دیا، “بالکل!”

جب خاتون پولیس افسر رخصت ہو گئیں تو ٹام نے دکان دار سے کہا، “میں اسے سفید پرس سے تبدیل کرنا چاہتا ہوں”۔

وہاں ایک خاتون سیاہ پرس خرید رہیں تھی اور دکان دار کو پہلے انہیں فارغ کرنا تھا۔

ٹام؛”مہربانی فرمائیں، میری ٹرین چھوٹ جائے گی “۔

خریدار؛” مجھے بھی دیر ہو رہی ہے ۔مجھے گھر جاکر رات کا کھانا بنانا ہے۔”

دکان دار؛”میرے پاس اسی قیمت میں 7،8 سفید پرس موجود ہیں ۔آپ کو یاد ہے انہوں نے کونسا پسند کیا تھا؟”

ٹام کے لیے تو تمام پرس ایک جیسے تھے ۔ اس نے بڑی مشکل سے یاد کرتے ہوئے دائیں جانب رکھا پرس لیتے ہوئے شاپنگ بیگ طلب کیا، تاکہ اس مرتبہ پولیس کو اس پہ چوری کا شبہ نہ ہو ۔

ٹام کے پاس 6 منٹ تھے۔ ریلوے اسٹیشن جاتے ہوئے وہ غلطی سے مخالف سمت میں مڑ گیا ۔

ٹام کو درست سمت میں جانے کے لیے سیڑھیوں والے پل کے اطراف سے گزرنا تھا اور اس کے پاس محض 2 منٹ بچے تھے۔ٹام نے بھاگتے ہوئے سیڑھیاں چڑھیں اور ٹرین میں چھلانگ لگا دی جس کے 1 سکینڈ بعد ٹرین روانہ ہو گئ۔

ٹام نے سکون کا سانس لیا۔”شکر ہے میں وقت پر پہنچ گیا”۔

ہلڈا بیگ کھولتے ہوئے چلائ،” یہ میرا سفید پرس نہیں ہے”۔

8 thoughts on “Which Purse?|کدام کیف – A Voice from Iran کونسا پرس از lalehchini.

  1. Mashallah! aapne Urdu tarjuma bahut achha kiya hai. Though story ki ending kaafi disappointing hai. Mohtarma Laleh Chini ki stories kaafi asardaar hoti hain. 🙂

  2. sometimes we also face similar situations/dilemma while shopping especially when there are too many choices before us. jazakallah khair

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.